صورتحال کو دیکھ کر تحصیل میں بھگدڑ مچ گئی۔ ایس ڈی ایم کا کہنا ہے کہ انہوں نے بزرگ کو تھپڑ نہیں مارا ہے۔ وہ ڈی ایم سے بدتمیزی سے بات کر رہے تھے جس کی وجہ سے انہوں نے سپاہیوں کے ذریعہ ان کو باہر کردیا۔

دو بچوں سمیت 6 لوگوں کی موت ہوگئی ہے اور دو لوگ شدید زخمی ہوگئے

انتظامیہ نے فورا اس زمین کی پیمائش کی تو وہ زمین قبرستان کی ہی نکلی۔ اس پر انتظامیہ نے میت کو اسی جگہ پر دفنانے کی اجازت دے دی۔ لیکن مینجر اجے یادو تب بھی ماننے

جمعرات کی رات گیارہ بجے کچھ لوگ آئے اور خود کومریض بتاکر ڈاکٹر سدرشن کا دروازہ کھٹکٹایا۔

لوگوں نے مقصود کی لاش کو اعظم گڑھ -فیض آباد سڑک پر رکھ کر احتجاج کیا اور مجرمین کی گرفتاری کی مانگ کی۔

سال 2013 میں مبارک پور اور اطراف میں زہریلی شراب پینے سے 40 سے زائد افراد کی موت ہوگئی تھی۔

ایس او نظا م آباد نے موقع کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے تھانہ سرائے میر ، پھول پور اور گمبھیر پور کی فورس کو بلالیا ۔ حالات ابھی قابو میں ہیں لیکن لوگوں کے بیچ تناؤ برقرار ہے ۔

حوصلہ نیوز سے بات کرتے ہوۓ نظام آباد کے ایس او نے بتایا کہ اس معاملہ میں ایف آئی آر درج کرلی گئی ہے اور لڑکی کو میڈیکل چیک اپ کے لئے

پولیس کا کہنا ہے کہ گھر والوں نے اپنی رپورٹ میں فیروز کو ذہنی حالت ٹھیک نہیں ہونا بتایا ہے لیکن عوام کا کہنا ہے کہ فیروز کا قتل کیا گیا ہے۔ فی الحال

کڑاکے کی اس ٹھنڈ میں ان لوگوں کے لئے تو راحت کا سامان میسر ہوتا ہے جن کے یہاں دولت کی کوئی کمی نہیں ہوتی ہے لیکن وہ غریب جن کے پاس سر ڈھانکنے کے لئے چھت تک میسر نہ ہو ان کے لئے برفیلی ہوائیں وبال جان ثابت ہوتی ہیں۔

HOME || ABOUT US || EDUCATION || CRIME || HUMAN RIGHTS || SOCIETY || DEVELOPMENT || GULF || RELIGION || SPORTS || LITERATURE || OTHER || HAUSLA TV
© HAUSLA.NET - 2017.