؞   اعظم گڑھ: تعلیمی کانفرنس سے علماء کا خطاب
۱۴ ستمبر/۲۰۱۸ کو پوسٹ کیا گیا
ا عظم گڑھ (حوصلہ نیوز): اسٹوڈینٹس ایسو سی ایشن فار اسلامک آئیڈیالوجی کی طرف سے جمعہ کو شبلی اکیڈمی میں ایک روزہ تعلیمی کانفرنس سے کا انعقاد کیا گیا جس میں مقررین نے صرف علم اور تعلیم کی اہمیت پر روشنی ڈالی بلکہ اسلام کے تصور تعلیم کو تفصیل سے پیش کیا اور تعلیم کے بعد شعوری آگہی پر بھی زور دیا۔
کانفرنس کی صدارت کرتے ہوئے مولانا محمد عمر اسلم اصلاحی نے کہا کہ آج کل سائنس اور ٹیکنالوجی کے کام پر بہت سے تعلیمی ادارے کھل گئے ہیں اور لوگ اسی کی بنیاد پر عالم اور جاہل کا تصور بھی کرتے ہیں، لیکن حقیقی معنوں میں علم وہ ہے جس سے معرفت خدا وندی حاصل ہو. جو ہمیں اچھے، برے، حق اور باطل کی پہچان کراتا ہو۔ باقی سب تو معلومات ہیں نہ کہ علم
فیڈریشن آف اسلامک یوتھ آرگنائزیشن کے کنوینر مولامولانا ڈاکٹر وجیہہ القمر فلاحی نے کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ موجودہ دور کے نظام تعلیم میں بہت سی خرابیاں (مخلوط تعلیم، سیکولر تعلیم، بگھوا تعلیم اور پرائیویٹ تعلیم) وغیرہ بہت اہم ہیں. ہمیں اس کے سدباب کے لیے لائحہ عمل تیار کرنا چاہتے اور اپنے بچوں کو دینی تعلیم سے کسی نہ کسی طرح جوڑے رکھنا چاہیے۔مولانا نے نوجوانوں سے خطاب کرتے ہوئےکہا کہ ہمیں اپنے تعلیمی میدان میں آگے بڑھنے کے لیے پہلی چیز جو ضروری ہے وہ یہ کہ ہم اپنا مقصد متعین کریں.
مولانا عمیرالصدیق ندوی نے اپنے خطاب میں کہا کہ مجھے اس بات پر افسوس ہے کہ آج ہمارے علماء جو مدارس 8 سال تک دینی تعلیم حاصل کرنے کے باوجود ذات، نسل، قبیلہ اور بہت سی رسومات میں نہ صرف پڑے رہتے ہیں بلکہ ان برائیوں کو روکنے کی بھی کوشش نہیں کرتے اور ہوتے ہوتے یہی سب رسومات بعض دفعہ دین کا حصہ سمجھی جانے لگتی ہیں.
اسٹوڈینٹس ایسوسی ایشن فار اسلامک آئیڈیالوجی (سعی) کے صدر معاذ احمد جاوید نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم اس مہم کے ذریعہ لوگوں تک یہ پیغام پہنچا نا چاہتے کہ وہ اچھی پڑھائی کے نام پر اپنی نونہالوں کو جن اسکول اور کالجز میں داخلہ کرواتے ہیں وہ کبھی اس بات پر بھی غور کریں کہ ان کا بیٹا یا بیٹی اسکول میں کیا کررہے ہیں. انہیں تعلیم کے نام پر کیا پڑھا جارہا ہے. ان کا دین و ایمان بھی محفوظ ہے کی نہیں۔

11 لائك

35 پسندیدہ

14 مزہ آگیا

24 كيا خوب

0 افسوس

0 غصہ


 
؞ ہم سے رابطہ کریں

تبصرہ / Comment
آپ کا نام
آپ کا تبصرہ
کود نقل کريں
؞   قارئین کے تبصرے
تازہ ترین
سیاست
تعلیم
گاؤں سماج
HOME || ABOUT US || EDUCATION || CRIME || HUMAN RIGHTS || SOCIETY || DEVELOPMENT || GULF || RELIGION || SPORTS || LITERATURE || OTHER || HAUSLA TV
© HAUSLA.NET - 2018.