؞   مدرسۃ الاصلاح :یہیں سے حوصلہ علم و ادب کا رہتا جواں
۳۱ جولائی/۲۰۱۸ کو پوسٹ کیا گیا
مدرسۃ الاصلاح کی نذر مدرسہ کی گود میں تربیت پائے طالب علم شاداب عمران سنجری* کے زریعہ لکھے گئے چند بند جو ان کے جذبات کی ترجمانی کررہے ہیں۔ لفظ لفظ میں عقیدت اور محبت کی ان کہی داستان پیش کرنے کی کوشش کی ہے اور اپنے منبع حصول علم میں سے مدرسۃ الاصلاح کو مادر علمی کا درجہ دیتے ہوئے لکھتے ہیں کہ "یہیں سے حوصلہ علم و ادب کا رہتا جواں":
یہ آسماں کی بلندی پہ اک چمکتا جہاں
یہیں سے حوصلہ علم وادب کا رہتا جواں

یہاں پہ دولت تعلیم ہے قدم بہ قدم
یہیں پہ شان جلالی کا ہے وہ خاص کرم
یہاں کی خوشبو مٹادے تمہارے رنج والم
یہ ایک عہد کا رکھے ہوئے ہے دیکھو بھرم

یہ اہل ہوش و خر د کا رہا ہمیشہ مکاں
یہیں سے حوصلہ علم وادب کا رہتا جواں

اس ایک ہستئی بیباک کے سہارے ہیں
ہم ایسے رند فقط ہوش ہی کے مارے ہیں
یہ شمس کیا ہے، قمر کیا ہے کیا ستارے ہیں
سبھی کے اس نے مقدر بھی یوں سنوارے ہیں

بلندیوں سے پرے ہے یہ ایک ایسا گماں
یہیں سے حوصلہ علم و ادب کا رہتا جواں

یہاں کے ناز وانداز سب نرالے ہیں
کچھ اہل فن کے کرم خود کے کچھ حوالے ہیں
ترانئہ شبِ تاریک سے اجالے ہیں
جو خواب دیکھے تھے اسلاف ہم سنبھالے ہیں

یہیں سے گونجی تھی خاموشیوں میں پہلی اذاں
یہیں سے حوصلہ علم و ادب کا رہتا جواں

نظام ہوش کی خاطر کوئی قرار ہے یہ
ثبات جوش عقیدت کا شاہکار ہے یہ
وفا کا آئینہ مجموعئہ وقار ہے یہ
یہی تو علم کا مرکز ہے اور شرار ہے یہ

رموز عہد محبت ہوا یہاں پہ عیاں
یہیں سے حوصلہ علم وادب کا رہتا جواں

یہ خود قدیم ہے انداز پر نیا رکھا
کہ اس نے خود کو زمانے سے بھی جدا رکھا
فقط حصولِ تمنا کا مدعا رکھا
اور خود میں نازکئِ دھر جابجا رکھا

میں دل یہ کھول کے شاداب کررہا ہوں بیاں
یہیں سے حوصلہ علم وادب کا رہتا جواں

*شاداب عمران، اعظم گڑھ کے معروف گاؤں سنجر پور کے رہنے والے ہیں۔ جنہوں نے 2013 میں مدرسۃ الاصلاح سے فراغت حاصل کی اس کے بعد دہلی کی مشہور یونیورسٹی جامعہ ملیہ اسلامیہ سے عربی زبان میں گریجویشن کیا اور ابھی عربی زبان سے ایم اے کررہے ہیں۔ شعر وشاعری سے ان کا دیرینہ لگاؤ ہے۔

3 لائك

4 پسندیدہ

1 مزہ آگیا

0 كيا خوب

0 افسوس

0 غصہ


 
؞ ہم سے رابطہ کریں

تبصرہ / Comment
آپ کا نام
آپ کا تبصرہ
کود نقل کريں
؞   قارئین کے تبصرے
تازہ ترین
سیاست
تعلیم
گاؤں سماج
HOME || ABOUT US || EDUCATION || CRIME || HUMAN RIGHTS || SOCIETY || DEVELOPMENT || GULF || RELIGION || SPORTS || LITERATURE || OTHER || HAUSLA TV
© HAUSLA.NET - 2018.