؞   حضرت مفتی عبدالله پھولپوری : ایک عاشق زار کی وفات کچھ زندہ یادیں
۳ دسمبر/۲۰۱۷ کو پوسٹ کیا گیا
تحرير : محمدتوصیف قاسمی
(حوصلہ نیوز) : وہ صبح روز کی سی صبح تھی ، جب تک یہ خبر صاعقہ اثر نہیں پہنچی تھی کہ حضرت اقدس مفتی عبدالله صاحب پھولپوری رحلت فرماگئے ، فانا لله وإنا إليه راجعون .
قلب و جگر پر یہ خبر مانو بادل کے پھٹنے یا زمین کے کھسکنے جیسی پڑی ، دل و دماغ سن رہ گئے ، نہایت معتمد ذریعہ سے خبر ملنے پر بھی یقین نہ ہوا جب تک دو چار جگہوں سے تصدیق نہ کرلی ، آخر ہونی کو کون ٹال سکتا ہے ، کئی موقعوں سے بات پہنچنے پر ہی انا لله زبان سے نکل سکا .
حضرت اقدس مفتی صاحب صحیح معنوں میں ملت کا سرمایہ عظیم تھے ، در کفے سندان شریعت ، در کفے جام عشق کا مصداق تھے ، آپ کی ذات والا صفات مردہ قلوب کے لئے سیرابی کا سامان تھی ، شیخ المشائخ صدیق دوراں شاہ عبدالغنی صاحب نور الله مرقدہ کے صحیح معنوں میں جانشیں ، محی السنة مولانا ابرارالحق صاحب رحمه الله کے معتمد و مجاز اور تربیت یافتہ ، شیخ العرب والعجم حکیم محمد اختر صاحب کے چہیتے اور دوسرے اکابر وقت کے منظور نظر تھے ، بلکہ آپ موجودہ وقت میں کسی لحاظ سے اکابر کی فہرست علیحدہ نہ تھے ، وقت بہت کم جن افراد کی فیاضی کرتا ہے ان میں سے ایک نادر شخصیت تھی حضرت مفتی صاحب کی جنھیں اب نور الله مرقدہ اور رحمة الله علیه کہتے ہوئے کلیجہ منھ کو آتا ہے .
*جامع کمالات*
جامعیت آپ کا طرہ امتیاز تھا ، ایک طرف کامیاب مدرس تو ساتھ ہی ناظم مدرسہ بھی ، فتوی پر درک ہے تو بخاری کا درس بھی لاجواب ہے ، علمی قیل و قال دامنگیر تو خانقاہی کیف و حال اوڑھنا بچھونا ، علوم کی خدمت ہے تو عوام کی بھی خدمات ہیں ، ملی و سماجی نیز سیاسی خدمات بھی آپ کی حیات کا ایک جیتا جاگتا باب ہیں .
الغرض آپ جامعیت کا ایک باب تھے ، جنھیں دیکھ کر لوگ اکابر کی یاد تازہ کرتے تھے .
*تزکیہ و تصوف کا رنگ*
تھانویت تو آپ کو نسلا اپنے دادا مولانا شاہ عبدالغنی صاحب سے ہی خونی رشتہ میں ملی تھی ، پھر تربیت کے لئے بھی آپ در محی السنة پر حاضر ہوئے جو خود شاہ صاحب کے باقاعدہ نہ سہی لیکن مستفیدین میں تھے ، پھر جو طرز طریق حضرت محی السنة کا عہد موجود میں اصلاح کا کامیاب تر تھا اس کی مثال مشکل ہے ، اس لئے اسی طرز و فکر کے اپنی فطری صلاحیت کے سبب بہت بڑے داعی و مبلغ ہوگئے.
راقم نے ہردوئی کی طالب علمی میں آستانہ محی السنة پر بڑے چھوٹے بہت سے اکابر و اصاغر اہل فضل و کمال کا جھرمٹ دیکھا ، لیکن جن کی یادیں ذہن پر نقش ہوئیں ان میں سے ایک حضرت مفتی پھولپوری رحمه الله تھے .
آپ کے صلاح و تقوی کا پتہ آپ چہرہ بشرہ دیتا تھا ، انداز گفتگو محبت الہی کا آبشار تھا ، کسی کا ترنم تو کسی کا تکلم مست کرتا ہے ، آپ کی خموشی اور مسکراہٹ اور ادا ہی معرفت و محبت کا دریا تھی ، حدیث : من الذين إذا روؤا ذكر الله . (جن انھیں دیکھو تو الله یاد آجائے ) کا چلتا پھرتا مفہوم تھے ، انداز گفتگو نہایت دلنشین ، سہل تراکیب ، جملوں سے زیادہ انداز سے پلانے والے .
*اعلی اخلاق کا نمونہ*
حضرت سے باقاعدہ ربط و تعلق یا آمد و رفت نہ رہی تاہم چند محبت بھری ملاقاتیں ہوئیں ، پہلی تفصیلی ملاقات مدرسہ بیت العلوم سرائے میں ہوئی ، پہلی آمد ،نو فارغ ،طالب علم نہیں تو طالب نما ضرور تھا ، لیکن عنایات سے پانی پانی ہوا جاتا تھا ، یوں محسوس ہی نہ ہوا کہ کوئی نو عمر جوان حاضر ہوا ہے ، دیکھ کر ہیبت شخصی کا اثر ہوئے لیکن گفتگو اتنا قریب کردے کہ آپ سے زیادہ کوئی قریب نہ ہو .

*حضرت محی السنة کی یادگار*
تزکیہ و اصلاح ، نہی عن المنکر ، عوامی سہل انداز خطاب آپ میں کافی حد تک حضرت ہردوئی کا سا تھا ، حتی کہ پسند و ناپسند بھی گویا ایک ہی میں گم ہوگئی تھی ، مدرسہ میں جب حضرت مفتی صاحب کی آرام گاہ میں داخل ہوا تو کچھ پل کو بھول گیا کہ یہ سرائے میر ہے یا آستانہ ابرار ؟ ہر چیز میں سفیدی ، بستر ، در و دیوار ، فرش و عرش ، الحاصل کہ ہر ذرہ میں شیخ کا عکس ، چند لمحے تو حضرتِ ابرار کی یادوں میں کھو گیا .
میرے ایک محسن کہتے ہیں کہ میرا تو جی چاہتا ہے کہ مفتی صاحب کو "آئینہ محی السنة" کہا کروں ، جو وہاں نظر آتا تھا اب مفتی صاحب کے یہاں بعینہ دکھائی دیتا ہے .
*ایک شب پھولپور کی*
حاضری پر رات قیام کی بات تھی تو فرمایا اگر مدرسہ میں قیام چاہیں تو یہاں ٹھہر جائیں اور چاہیں تو پھولپور چلیں ، کم وقت لیکر گیا تھا ، دوسرے موقع کا انتظار طویل جھٹ سے پھولپور کی حامی بھردی ، صبح کو خانقاہ دکھائی ، حضرت شاہ عبدالغنی صاحب کی کچھ یادگاریں دکھائیں ، خانقاہ میں مقیمین کے بارے ملاقات سے قبل فرمایا یہ یومیہ 24 ہزار کا ذکر کرنے والے حضرات ہیں ، بعد فجر ایک اپنی نوع کی مجلس تھی ، کبھی کچھ فرمادیتے ، کوئی سوال کرلیتا ، کبھی دوسرے موجود حضرات کی بات سن لیتے .


5 لائك

0 پسندیدہ

1 مزہ آگیا

0 كيا خوب

2 افسوس

0 غصہ

 
؞ ہم سے رابطہ کریں

تبصرہ / Comment
آپ کا نام
آپ کا تبصرہ
کود نقل کريں
؞   قارئین کے تبصرے
تازہ ترین
سیاست
تعلیم
گاؤں سماج
HOME || ABOUT US || EDUCATION || CRIME || HUMAN RIGHTS || SOCIETY || DEVELOPMENT || GULF || RELIGION || SPORTS || LITERATURE || OTHER || HAUSLA TV
© HAUSLA.NET - 2017.