؞   لکھنؤ انکاؤنٹر کو فرضی بتانے پر مولانا عامر رشادی کے خلاف ایف آئی آر
۱۰ مارچ/۲۰۱۷ کو پوسٹ کیا گیا
لکھنؤ/کانپور (حوصلہ نیوز) : راشٹریہ علماء کونسل کے قومی صدر مولانا عامر رشادی مدنی نے لکھنؤ میں ہوۓ انکاؤنٹر کو فرضی بتایا ہے۔ ان کے اس بیان کو لے کر کانپور میں مقتول سیف اللہ کا بھڑکانے کا مقدمہ درج کیا گیا ہے۔
مولانا رشادی نے لکھنؤ میں پولیس کے ذریعہ مارے گئے مرحوم سیف اللہ کے گھر والوں سے ملنے کانپور گئے تھے۔ وہاں انہوں نے کہا کہ بٹلہ ہاؤس انکاؤنٹر کے طرز پر یہ انکاؤنٹر پوری طرح فرضی ہے۔ مولانا نے اس معاملہ میں سپریم کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹانے کی بات بھی کہی۔ انہوں نے ای ٹی ایس کو مسلم مخالف اسکواڈ بھی بتایا۔
مولانا کے اس بیان کے بعد جہاں سیاسی ماحول میں گرمی آگئی وہیں پولیس اور انتظامیہ کے ذریعہ مولانا پر مقتول کے اہل خانہ کو بھڑکانے کے الزام میں اعلی افسروں کے ذریعہ ایف آئی آر بھی درج کی گئی۔
واضح ہو کہ اس انکاؤنٹر پر مسلم طبقہ کی طرف سے سوالات اٹھنے شروع ہوگئے ۔ رہائی منچ نے اس سلسلے میں سوالات کی ایک فہرست بھی تیار کی ہے جس میں پولیس اور اے ٹی ایس سے جواب طلب کئے گئے ہیں
مولانا رشادی کو جہاں اس بیان سے ایک طرف مخالفتوں کا سامنا ہے وہیں اعظم گڑھ اور دوسری جگہوں کے لوگ جن میں مولانا کے سیاسی حریف بھی شامل ہیں ، کھل کر مولانا رشادی کی حمایت کر رہے ہیں۔

2 لائك

0 پسندیدہ

0 مزہ آگیا

1 كيا خوب

0 افسوس

1 غصہ

 
؞ ہم سے رابطہ کریں

تبصرہ / Comment
آپ کا نام
آپ کا تبصرہ
کود نقل کريں
؞   قارئین کے تبصرے
تازہ ترین
سیاست
تعلیم
گاؤں سماج
HOME || ABOUT US || EDUCATION || CRIME || HUMAN RIGHTS || SOCIETY || DEVELOPMENT || GULF || RELIGION || SPORTS || LITERATURE || OTHER || HAUSLA TV
© HAUSLA.NET - 2017.